چار افراد کی ہڈیاں ٹوٹنے کے بعد دنیا کی سب سے تیزرفتار رولرکوسٹر بند

ٹوکیو: جاپان میں دنیا کی سب سے تیزرفتار اور تیز اسراع (ایکسلریشن) حاصل کرنے والی رولر کوسٹر میں تماشائیوں کی ہڈیاں ٹوٹنے کے واقعات کے بعد اسے بند کردیا گیا ہے۔

ڈو ڈونپا رولرکوسٹر جاپان کے خوبصورت فجی پہاڑ کے دامن میں واقع ہے جس کی رفتار کو اکثر لوگ موت کی رفتار بھی کہتے ہیں۔ اس کے تیزرفتار اسراع کی وجہ سے جھٹکوں سے لوگوں کو فریکچر کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ یہ صرف ڈیڑھ سیکنڈ میں صفر سے 180کلومیٹر تک جاپہنچتی ہے اور اسی وجہ سے لوگوں کی کمر اور گردن ہل کر رہ جاتی ہے۔

یہ دنیا کی واحد رولر کوسٹر ہے جس کا دائرہ (لوپ) سب سے بڑا ہے۔ تاہم ذیادہ تر چوٹ کے واقعات دسمبر 2020 سے اگست 2021 میں رپورٹ ہوئے ہیں لیکن بعض حوالوں سے ان کی تعداد چھ ہے۔ تاہم کئی ذرائع کا خیال ہے کہ ہڈیاں ٹوٹنے یا فریکچر ہونے کے واقعات اس سے زیادہ ہوسکتےہیں۔
رولرکوسٹرفیوجی کیوعلاقے میں واقع ہے ۔ اگرچہ جاپان سمیت دنیا بھر کے تفریحی پارکوں میں چوٹ یا حادثات کی شرح بہت کم ہے لیکن جاپانی رولر کوسٹر میں حادثوں کے بعد ہرپہلو سے تحقیق کی جارہی ہے۔ واضح رہے کہ ڈو ڈوڈونپا رولر کوسٹر 2001 میں جاری کی گئی تھی اور 2017 میں اس کی رفتار مزید بڑھائی گئی تھی تاہم اس وقت بھی کوئی عوامی شکایت موصول نہیں ہوئی تھی۔

اس مسئلے پر جب تعمیرات کے ایک پروفیسر ناؤیا میاساٹو کی رائے لی گئی تو انہوں نے کہا کہ اس کا ہولناک اسراع ہی لوگوں میں ہڈیاں ٹوٹنے کی وجہ بناہوا ہے کیونکہ اس کا اثرکششِ ثقل سے پڑنے والے بوجھ سے بھی تین گنا زائد ہے جو خلانوردوں کو خلا میں روانگی کے وقت ہوتا جسے وہ اپنے خاص سوٹ کی بدولت ہی جھیل سکتے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں